صبح یکشنبه ۱۱ رجب المرجب ۱۴۳۸ (مطابق با ۲۰ فروردین ۱۳۹۶)، مسئول و اعضای ستاد امر به معروف و نهی از منکر استان قم با حضور در بیت مرجع عالیقدر حضرت آیت الله العظمی صافی گلپایگانی مدظله الوارف دیدار کردند. در ابتدای این دیدار، حجه الاسلام آقای معرفت...
Friday: 28 / 04 / 2017 ( )

Printer-friendly versionSend by email
احكام روزہ

س۱۔ اگر كوئي شخص ماہ رمضان المبارك ميں سو كر اٹھے اور اسے معلوم ہو كہ اذان كا وقت گزر چكا ہے تو كيا اس كا روزہ صحيح ہے ؟
جواب: ہاں اس كا روزہ صحيح ہے ۔

س۲۔ جو شخص نماز پڑھنے ميں كوتاہي كرتا ہے اس كے روزے كا كيا حكم ہے ؟ 
جواب : روزہ ايك دوسرا امر واجب ہے ، نماز نہ پڑھنے والا انسان گنہگار ہے ليكن اس نے جو روزہ ركھا ہے وہ صحيح ہے ۔

س۳۔ اگر ماہ رمضان المبارك ميں غلط طريقہ سے قرآن پڑھيں تو روزہ پر كيا اثر پڑے گا (يعني قرآني كلمات كو صحيح تلفظ سے ادا نہ كريں) 
جواب : اگر جان بوجھ كر آيات كو غلط نہيں پڑھتا تو كوئي حرج نہيں ہے ، تلاوت قرآن ميں تجويدي قواعد كي رعايت واجب نہيں ہے ۔ 
 

سوال ۴۔ جن لوگوں كا كام دريا ميں غوطہ لگانا ہے ان كے روزے اور نماز كا حكم بيان فرمائيں ؟ 
جواب : احتياط واجب كي بنا پر غواصي كا لباس پہن كر پاني ميں جانے سے بھي روزہ باطل ہو جاتا ہے ليكن اگر انسان ايسے كيبن ميں بيٹھ كر پاني ميں جائے جو كمرے كےمانند ہوتا ہے اور انسان كے بدن سے چپكا ہوا نہيں ہوتا تو اس كا روزہ باطل نہيں ہوگا ۔ نماز كے متعلق اگر كوئي انسان غواصي كے لباس ميں پاني كے اندر جائے اور باہرنكلنا ممكن نہ ہو وقت تنگ ہو تو پاني كے اندرہي جس قدر ممكن ہو قرائت كرے اور ذكر ركوع و سجود كےساتھ اشارے سے ركوع و سجدہ بھي بجالائے اور احتياط واجب يہ ہے كہ اس نماز كي بعد ميں قضا بھي بجا لائے ۔ واللہ العالم

 

سوال ۵۔ كيا سگريٹ اور حقہ پينے سے روزہ باطل ہو جاتا ہے ؟ 
جواب: احتياط واجب كي بنا پر روزہ دار كو سگريٹ اور حقہ  کا دھواں حلق ميں نہيں لے جانا چاہئے ۔ 
 

سوال۶۔ اگر سگريٹ پئے اوراس كا دھواں حلق ميں نہ لے جائے تو كيا روزہ باطل ہو جائے گا ؟ 
جواب : اگر دھواں حلق ميں نہ لے جائے تو روزہ باطل نہيں ہوگا ليكن علي الاعلان سگريٹ نوشي مناسب نہيں ہے لہذا ماہ رمضان كےاحترام ميں اس سے پرہيز كرنا چاہئے ۔
 

سوال ۷۔ طاقت اور پن سلين كا انجكشن لگوانےسے كيا روزہ باطل ہو جاتا ہے ؟
جواب : كوئي حرج نہيں ہے ، تمام قسم كے انجكشن ايك طرح ہيں البتہ احتياط مستحب يہ ہے كہ اسے ترك كر ديا جائے ۔ 
 

سوال ۸۔ اگر كوئي ماہ رمضان ميں نماز صبح سے پہلے بيدار ہو جبكہ وہ سوتے وقت محتلم ہو گيا ہو ليكن اس كے لئے اس وقت غسل ممكن نہ ہو تو اس كے روزے كا كيا حكم ہے؟ 
جواب : مفروضہ سوال كي صورت ميں اگر مكلف غسل كرنے پر قادر نہيں ہے تو غسل كے بدلے تيمم كر كے روزہ ركھے گا ۔
 

سوال ۹۔ اگر كوئي انسان اپنے عضو تناسل سے چھيڑ چھاڑ كرے اور مني نہ نكلے ليكن بعد ميں وہ پيشاب كرے تو اس وقت سفيد رنگ كي رطوبت خارج ہو جس ميں شك ہے كہ مني ہے يا نہيں تو اس كا روزہ صحيح ہے كہ نہيں اور اگر باطل ہے تو روزے كا كفارہ بھي دينا ہوگا يا نہيں ؟ 
جواب: اگر ايسا كام كرے جس كي وجہ سے عام طور پر مني نكلتي ہے تو اس كا روزہ باطل ہے چاہے انزال ہو يا نہ ہو ليكن مذكورہ فرض كي صورت ميں كفارہ كا واجب ہونا معلوم نہيں ہے ۔ واللہ العالم 
 

سوال ۱۰۔ اگر كسي كو نہ معلوم ہو كہ استمنا سے روزہ باطل ہو جاتا ہے حتيٰ يہ بھي نہ جانتا ہو كہ يہ گناہ كبيرہ ہے اور اس عمل كو انجام دے تو كيا اس كا روزہ باطل ہے ؟ اگر باطل ہے تو اس پر كفارہ بھي ہے يا نہيں؟ كفارہ كي مقدار كيا ہوگي ؟
جواب: مذكورہ سوال كي صورت ميں روزے كي قضا واجب ہے ليكن كفارہ واجب نہيں ہے ؟ ليكن اگر جاہل مقصر ہو يعني اس عمل كے ارتكاب كے وقت اسے اس فعل كے حرام ہونے كا احتمال ہو اور وہ كسي سے دريافت نہ كرے تا اسے معلوم ہو كہ استمناء حرام ہے چاہے يہ نہ جانتا ہو كہ اس سے روزہ باطل ہو جاتا ہے اور رمضان المبارك كے دن ميں يہ فعل انجام دے تو اس پر كفارہ جمع واجب ہوگا (اس كي تفصيل توضيح المسائل كے مسئلہ نمبر ۱۶۷۴ پر موجود ہے )
 

سوال ۱۱۔ اگر كوئي انسان كلاس ميں ہو اور اسے محسوس ہو كہ اس كے دانتوں ميں كھانا پھنسا ہے اور وہ تھوڑي دير صبر كرے تاكہ كلاس ختم ہونے كے بعد اسے منہ سے باہر نكال دے ليكن بعد ميں اسے يہ احتمال قوي ہو كہ وہ كھانا تھوك كے ساتھ حلق كے اندر چلا گيا ہے تو كيا اس كا روزہ باطل ہے يا ايسا شخص معذور ہے ؟ 
جواب: مفروضہ صورت ميں صرف غذا كے دانتوں ميں پھنسے ہونے كے احتمال كي بنياد پر جب تك كہ وہ تھوك كے ہمراہ حلق كے اندر نہ جائے، اس سے روزہ باطل نہيں ہوتا ہے ليكن ايسے شخص پر ضروري ہے كہ جس طرح بھي ممكن ہو كھانا پيٹ ميں نہ جانے دے ليكن اگر وہ صرف احتمال دے كہ كھانا پيٹ ميں چلا گيا ہے تو احتمال كي بنياد پر روزہ باطل نہيں ہوگا ۔

موضوع: 
استفتائاتموضوعی
Thursday / 15 January / 2015