مشهد مقدس همزمان با سالروز شهادت امیرالمؤمنین علی بن ابیطالب علیه‌السلام حال و هوای دیگری داشت.   هیئات و دسته‌های بزرگ عزاداری و جمعیت هزاران نفری عشاق مولای خوبان علی علیه‌السلام با چشمانی اشکبار و قلوبی اندوهگین با دعوت مرجع عالیقدر...
Wednesday: 28 / 06 / 2017 ( )

Printer-friendly versionSend by email
عيد نوروز کے متعلق سوال اور آیت اللہ العظمی صافی گلپایگانی کا جواب

عيد نوروز کے متعلق سوال اور آیت اللہ العظمی صافی گلپایگانی کا جواب

 

بسمه تعالي

مرجع عالیقدر حضرت آيت الله العظمي صافي گلپايگاني مدظله العالي.
سلام عليكم؛
آپ سے گذارش ہے کہ نوروز کی شرعی حیثیت بیان فرمائیں؟اور کیا اسے عید کا عنوان دے سکتے ہیں؟

 

بسم الله الرحمن الرحيم
 

عليكم السلام ورحمة‌ الله و برکاتہ

عید الفطر، عید الضحی ،عید غدیر، پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اور ائمۂ معصومین علیہم السلام کی ولادت کے ایّام اسلام کی بزرگ، مذہبی اور شرعی عیدیں ہیں۔

اگر مؤمنین عید نوروز کے دن بھی دینی و مذہبی پروگرام (جیسے مؤمن بھائیوں سے ملاقات کرنا،بیماروں کی عیادت کرنا،ضرورت مندوں کی مدد کرنا)تشکیل دیں اور برائی پھیلانے والے امورانجام نہ دیں تو یہ مناسب ہے۔

حدیث میں وارد ہوا ہے : «كُلُّ‏ يَوْمٍ‏ لَا يُعْصَى‏ اللهُ فِيهِ فَهُوَ يَوْمُ عِيدٍ»(1)؛یعنی جس دن خدا کی معصیت انجام نہ دی جائے تو وہ عید کا دن ہے۔

نوروز یعنی روز نو(نیا دن)، بہار کا پہلا دن اور یہ خود موسم بہار کی طرح واقعی و تکوینی امر ہے اور اس کا جمشید سے کوئی ربط نہیں ہے۔ خدا جانتا ہے کہ اس کا وجود جمشید سے کتنے ہزار اور کتنے ملین سال پہلی تھا۔ قرآن مجید میں ارشاد ہوتا ہے: «اعْلَمُوا أَنَّ اللهَ يُحْيِ الْأَرْضَ بَعْدَ مَوْتِها»(2)

نیزاحتمال کہ اس دن غسل یا کوئی بھی دوسری عبادت اسی مناسبت سے ہو۔ واللہ العالم۔

انشاء اللہ کامیاب و کامران رہیں۔

                                                                                                                                     لطف الله صافي/ 23 ربيع الثاني1433
 

 


۱۔ نهج البلاغة؛ حكمت428.
۲۔ سوره حديد؛ آيه 17.
 

 

موضوع: 
استفتائاتجدیدترین
Friday / 15 July / 2016