بسم الله الرحمن الرحیم «إنّا لله و إنّا إلیه راجعون» رحلت آیة الله زاده معظّمِ مرجع عالیقدر مرحوم آیة الله العظمی آقای حاج سید احمد خوانساری قدّس سره حجة الإسلام و المسلمین آقای حاج سید جعفر خوانساری ره صهر مکرّم مرجع عالیقدر مرحوم آیة الله...
چهارشنبه: 1397/08/30 - (الأربعاء:13/ربيع الأول/1440)

Printer-friendly versionSend by email
حرفِ اوّل ...
امیر المؤمنین حضرت علی بن أبی‌طالب علیہما ‌السلام کے میلاد مسعود کی مناسبت سے آیت اللہ العظمی صافی گلپایگانی کا ایک نوشتہ

بسم الله الرحمن الرحيم
اين شرح بي‎نهايت كز وصف يار گفتند *** حـرفی است از هزاران كاندر عبارت آمد

رسول خدا صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی ذات والاءصفات کے بعد امیر المؤمنین علی بن ابی طالب علیہما السلام کی ذات و شخصیت اشرف كلمات الهيّه، اكبر آيات ربّانيه، ادلّ دلائل جامعه، اتمّ براہين ساطعه، وسائل كافيه ، مظهر العجائب و معدن الغرائب ہے ۔ آپ تمام برتر انسانی عظمتوں کے حامل ہیں اور آپ برحق خلیفۃ اللہ ہیں ۔ آپ سے محبت ؛ صحیفۂ مؤمن کا عنوان اور ولادت میں طہارت کی علامت ہے ۔ اگر تمام گویا و ناطق زبانیں انسان کے اختیار میں ہوں اور وہ ان میں سے ہر ایک کے ساتھ آپ کی مدح و ثناء کرنا چاہئے تو پھر بھی وہ آپ کی مدح و ثناء کے  حرف اوّل سے زیادہ نہیں کہہ پائے گا ۔

حالانکہ مسلمانوں کے درمیان مشہور اور معتبر احادیث و روایات کی رو سے اس باب میں پیغمبر اعظم ، عقل کل ، خاتم رسل اور ہادی سبل حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے معنی سے بھرپور تعریفات و تمجیدات بیان فرمائی ہیں اور امیر المؤمنین علی بن ابی طالب علیہما السلام کو حق اور قرآن کے ساتھ ، اور حق اور قرآن کو علی علیہ السلام کے ساتھ قرار دیا ہے ۔ اور انہیں آپس میں اس طرح سے لازم الاتصال قرار دیا ہے کہ جو کبھی بھی ایک دوسرے سے جدا نہیں ہو سکتے ۔ نیز پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا :

"وَ الَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ لَوْ لَا أَنْ‏ تَقُولَ‏ طَوَائِفُ‏ مِنْ‏ أُمَّتِي‏ فِيكَ مَا قَالَتِ النَّصَارَى فِي ابْنِ مَرْيَمَ لَقُلْتُ الْيَوْمَ فِيكَ مَقَالًا لَا تَمُرُّ بِمَلَإٍ مِنَ الْمُسْلِمِينَ إِلَّا أَخَذُوا التُّرَابَ مِنْ تَحْتِ قَدَمَيْكَ لِلْبَرَكَةِ؛

مجھے قسم ہے اس ذات اقدس  کی کہ جس کے دست قدرت میں میری جان ہے ! اگر میری امت کے کچھ گروہ تمہارے (علی علیہ السلام) بارے میں وہ کچھ نہ کہتے کہ جو نصاری عیسی بن مریم کے بارے میں کہتے تھے تو میں تمہارے بارے میں ایسی باتیں (اسرار) بیان کرتا کہ مسلمانوں میں سے کوئی ایک گروہ بھی ایسا نہ ہوتا  جو تمہارے قدموں کی خاک کو تبرک اور برکت کے لئے نہ اٹھاتا"(1)

اور کبھی رسول  خدا صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے اپنی زبان معجز بیان اور حقیقت ترجمان سے یوں بیان فرمایا : "لَوْ أَنَّ الْبَحْرَ مِدَادٌ وَ الْغِيَاضَ أَقْلَامٌ وَ الْإِنْسَ‏ كُتَّابٌ‏ وَ الْجِنَّ حُسَّابٌ مَا أَحْصَوْا فَضَائِلَكَ يَا أَبَا الْحَسَنِ؛

اے علی ! اگر دریا سیاہی ، درخت قلم ، انسان کاتب ، اور جنّات حساب کرنے والے بن جائیں تو پھر بھی وہ تمہارے فضائل کو شمار نہیں کر سکتے ۔"(2)

کلمۃ اللہ کی سربلندی اور حق کے دفاع کے لئے راہ خدا میں اس مرد مجاہد کے جہاد کو جنّ و انس کی عبادتوں ، یا تمام امت سے افضل قرار دیا گیا ہے ۔

لہذا اب کوئی اور امیر المؤمنین حضرت امام علی بن ابی طالب علیہما السلام کی مدح و ثناء میں کیا کہہ سکتا ہے ؟! کیونکہ آفتاب تابان محمدی ، اور بحر بیکرانِ علم احمدی صلوات اللہ علیہ و آلہ کے سامنے سب ایک ذرّے اور قطرے کی مانند ہیں ، بلکہ اس سے بھی کمتر ہیں۔   

حقیقت یہ ہے کہ انتیس حروف تہجی  (فارسی یا عربی زبان کے حروف تہجی ) پر مشتمل کلمات اور جملوں کے ذریعے خدا کے خاص اور مخلص بندوں میں سے بزرگ ہستی کی مدح و ثناء نہیں کی جا سکتی کہ جن کی خداوند متعال نے خود قرآن مجید کی متعدد آیات میں مدح و ثناء اور توصیف و ستائش بیان فرمائی ہے ۔

امیر المؤمنین ، مولی  الموحّدین ، سید الزاہدین ، پیشوائے مجاہدین  امام عظیم علی بن ابی طالب علیہما السلام کی مدح و ثناء میں اپنی کی عظمتوں کے ایک گوشہ کی طرف اشارہ کیا گیا ہے ۔

کسی نے اس جملے کے ذریعے مولائے کائنات کی مدح کی : "إحتياجُ الكُلِّ إلَيْهِ وَ إسْتِغْنائُه عَنِ الكُلِّ دَليلٌ عَلى أنَّه إمَامُ الكُلِّ ؛ سب لوگ اس کے محتاج ہیں اور اور وہ سب سے بے نیاز ہے ، یہ اس بات کی دلیل ہے کہ وہ سب کا امام ہے ۔ "(3)

نیز کسی نے امیر المؤمنین علی بن ابی طالب علیہما السلام کے کلام کی توصیف و تمجید میں یوں کہا : "كلامُهُ دُونَ كَلامِ الخَالِقِ وَ فَوْقَ كَلامِ الْمَخْلُوقينَ؛ ان کا کلام خالق کے کلام سے پائین تر اور مخلوق کے کلام سے بالا تر ہے ۔ "(4) سب نے مولائے کائنات امیر المؤمنین علی علیہ السلام کے مناقب میں سے کسی ایک فضیلت کی طرف اشارہ کیا ہے ۔

چودہ صدیوں سے علماء و حکماء حضرت امام علی علیہ السلام کے فضائل بیان کر رہے ہیں اور آپ کے علم ، فضیلت ، زہد ، عدل اور کمالات انسانی کی ستائش کر رہے ہیں اور آنے والی نسلیں بھی ان کی مدح و ثناء اور توصیف و تمجید کرتی رہیں گی ۔

امیر المؤمنین امام المتقین علی بن ابی طالب علیہما السلام کے شخصیت کی شرح میں بے شمار قصائد و اشعار کہے گئے ، ہزاروں کتابیں اور مقالات لکھے گئے اور سب نے داد سخن دی لیکن اس کے باوجود پھر بھی متکلمین اور دانشور نکتۂ اوّل سے آگے نہیں بڑھ سکے ۔

جیسا کہ احادیث شریف میں بیان ہوا ہے کہ علی علیہ السلام کی ذات وہ معجزہ ہے کہ جو خداوند کریم نے خاتم الأنبیاء حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کو عطا فرمایا ۔ یہ ایسا معجزہ ہے کہ جو تمام گذشتہ انبیاء کے معجزات سے عظیم ، بزرگ اور زیادہ حیرت انگیز ہے ۔ ہم یہاں حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام کے اس سخن کو بیان کرنا مناسب سمجھتے ہیں :

"الصُّورَةُ الإنْسَانِيَّةُ هِيَ أكْبَرُ حُجَجِ اللهِ عَلى خَلْقِهِ وَ هِيَ الكِتابُ الَّذي كَتَبَه بِيَدِهِ وَ هِيَ الهَيْكَلُ الّذي بَناهُ بِحِكْمَتِهِ وَ هِيَ مَجْمُوعُ صُوَرِ العَالَمينَ وَ هِيَ المُخْتَصَرُ مِنَ العُلُومِ في اللَّوحِ الْمَحْفُوظِ"(5) ۔ علی علیہ السلام جیسی شخصیت کے ذریعے حقیقت و واقعیت بیان ہوتی ہے ۔

پس ہم پر لازم ہے کہ ہم اس امیر المؤمنین امام علی علیہ السلام جیسی نعمت عظمیٰ ، آپ کی نعمت والایت اور حضرت صاحب الزمان ، وليّ عصر ، مالك امر ، مولانا المہدي ارواح العالمين له الفداء تک آپ کے تمام فرزندوں جیسی بے مثال نمعت کے لئے خداوندم کریم کی بے پناہ حمد و ثناء کریں : اَلْحَمْدُللهِ الَّذي جَعَلَنا مِنَ الْمُتَمَسِّكينَ بِولايةِ اَميرَالْمُؤْمِنينَ وَ الاَئِمَّةِ الْمَعْصُومينَ سِيّما خاتَمِهِمْ وَ قائِمِهِمْ صَلَواتُ اللهِ عَلَيهِمْ اَجْمَعينَ.

 

حوالہ جات :
۱ ، ۲ ۔  بحار الأنوار، جلد ‏40، باب  91 ، حديث  114.
۳۔  بغية الوعاة سيوطي، صفحه 243؛ تنقيح المقال مامقاني، جلد 1، صفحه 402، شماره 3769.
۴ ۔  شرح نهج البلاغة ابن أبي‌الحديد، جلد ‏1، صفحه 24.
۵ ۔  سورۂ بقرہ کی آیت ۲ کے ذیل میں تفسیر صافی سے منقول .

دوشنبه / 20 فروردين / 1397